پہلے تو مٹی کا اور پانی کا اندازہ ہوا

شاہین عباس

پہلے تو مٹی کا اور پانی کا اندازہ ہوا

شاہین عباس

MORE BYشاہین عباس

    پہلے تو مٹی کا اور پانی کا اندازہ ہوا

    پھر مجھے اپنی پریشانی کا اندازہ ہوا

    اے محبت تیرے دکھ سے دوستی آساں نہ تھی

    تجھ سا ہو کر تیری ویرانی کا اندازہ ہوا

    عمر بھر ہم نے فنا کے تجربے خود پر کئے

    عمر بھر میں عالم فانی کا اندازہ ہوا

    اک زمانے تک بدن بے خواب بے آداب تھے

    پھر اچانک اپنی عریانی کا اندازہ ہوا

    تیرے ہاتھوں جل اٹھے ہم تیرے ہاتھوں جل بجھے

    ہوتے ہوتے آگ اور پانی کا اندازہ ہوا

    صورتیں بگڑیں تو اپنی حالتوں میں آئے ہم

    آئینہ ٹوٹا تو حیرانی کا اندازہ ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے