پہلو و پشت و سینہ و رخسار آئنہ

پروین ام مشتاق

پہلو و پشت و سینہ و رخسار آئنہ

پروین ام مشتاق

MORE BYپروین ام مشتاق

    پہلو و پشت و سینہ و رخسار آئنہ

    ہے رزم گاہ حسن کا یہ چار آئنہ

    کف آئنہ بر آئنہ رخسار آئنہ

    ہے سر سے پاؤں تک وہ ستم گار آئنہ

    ہٹتا نہیں جو سامنے سے اس کے رات دن

    ہم سے سوا ہے طالب دیدار آئنہ

    یہ تو مرا رقیب ہے میں مانتا نہیں

    کیوں دیکھتا ہے آپ کو ہر بار آئنہ

    رخ کا ہے عکس دل میں تو رخ میں ہے دل کا عکس

    ہے آئنے کے سامنے ہر بار آئنہ

    خلوت میں اس کے نور سے عالم ہے طور کا

    ہیں آب و تاب سے در و دیوار آئنہ

    غش کھا کے گر پڑے نہ کہیں رعب حسن سے

    اس واسطے ہے پشت بہ دیوار آئنہ

    کس میں ہے آب و تاب سوا دیکھ لیجئے

    اک بار اس کا چہرہ اور اک بار آئنہ

    رخ کا اور اس کا ہو گیا اک بار فیصلہ

    اچھا ہوا کہ مان گیا ہار آئنہ

    لبریز ہے شعاع رخ دل فروز سے

    لے آب حسن ساغر سرشار آئنہ

    پرویںؔ جہاں میں اس کی جھپکتی نہیں پلک

    حیرت کا آپ کرتا ہے اقرار آئنہ

    مأخذ :

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے