آج کے منتخب ۵ شعر

انہیں پتھروں پہ چل کر اگر آ سکو تو آؤ

مرے گھر کے راستے میں کوئی کہکشاں نہیں ہے

مصطفی زیدی

اس زندگی میں اتنی فراغت کسے نصیب

اتنا نہ یاد آ کہ تجھے بھول جائیں ہم

احمد فراز

مکتب عشق کا دستور نرالا دیکھا

اس کو چھٹی نہ ملی جس کو سبق یاد ہوا

میر طاہر علی رضوی
  • شیئر کیجیے

کہہ رہا ہے شور دریا سے سمندر کا سکوت

جس کا جتنا ظرف ہے اتنا ہی وہ خاموش ہے

the river's raging is advised by the tranquil sea

the greater power you possess, the quieter you be

the river's raging is advised by the tranquil sea

the greater power you possess, the quieter you be

ناطقؔ لکھنوی

بہت پہلے سے ان قدموں کی آہٹ جان لیتے ہیں

تجھے اے زندگی ہم دور سے پہچان لیتے ہیں

فراق گورکھپوری
آج کا لفظ

مقتل

  • maqtal
  • मक़्तल

معنی

a place of slaughter or, execution

یہ کس نے ہم سے لہو کا خراج پھر مانگا

ابھی تو سوئے تھے مقتل کو سرخ رو کر کے

لغت

کیا آپ کو معلوم ہے؟

کشور

مشہور شاعرہ اور مصنفہ کشور ناہید کی چونکا دینے والی سوانح عمری 'بری عورت کی کتھا' پہلے ہندوستان میں 1994 میں شائع ہوئ تھی۔ کتاب میں ان کی زندگی کے حالات سے زیادہ سماجی سروکار ہے اور معاشرے میں عورت کی حیثیت کا مقدمہ ہے۔ تیرہ ابواب میں تقسیم اس کتاب میں پہلے چھ ابواب میں ان کے آبائ وطن بلند شہر، خاندانی رسم ورواج، پاکستان ہجرت کی صعوبتوں اور تیرہ برس کی عمر سے قلمی دوستیوں کے شوق، لاہور میں کالج کے زمانے کی سرگرمیوں، شاعری کی مقبولیت، مشاعروں اور محفلوں کا ذکر ہے۔ ایک باب کا عنوان "پہلی لغزش" ہے، جس میں ان کے یوسف کامران سے معاشقے، اپنے گھر والوں کو بتائے بغیر اچانک ان سے شادی، جس کی وجہ سے گھر والوں نے قطع تعلق کر لیا تھا، سسرال والوں کی نفرت اور طنز، کشور کی ملازمت، اخراجات کی پریشانی، بچوں کی پیدائش و پرورش، شوہر کی عیاشیوں اور رنگین مزاجیوں کی تفصیل ہے۔ اس کے علاوہ اس کتاب میں کشور نے اپنے ملکی اور غیر ملکی دوستوں، سرکاری افسروں اور ہم عصر ادیبوں، شاعروں کا تذکرہ بہت بے باکی سے کیا ہے اور لوگوں کے چہروں سے نقابوں کو اتار پھینکا ہے۔ شراب کی محفلوں میں مدہوشی کے عالم میں لوگوں کی عجیب عجیب حرکتوں کی تصویر کشی بھی ہے۔ کتاب میں کجھ مشہور نسوانی تاریخی کرداروں کو تانیثی نقطہ نظر سے موضوع بحث بنایا ہے۔ اس کتاب کا اسلوب دیگر خود نوشتوں سے بہت مختلف ہے۔ واقعات کے بیان کے درمیان طویل خود کلامیاں یا مونولوگ بھی درمیان میں شامل ہے، جو اکثرنثری نظم کا لطف دے جاتے ہیں۔

سابقہ مشمولات

آج کی پیش کش

ممتاز مقبول شاعر اور فلم نغمہ نگار۔ فلم’پاکیزہ‘ کے گیتوں کے لئے مشہور

کون آئے گا یہاں کوئی نہ آیا ہوگا

میرا دروازہ ہواؤں نے ہلایا ہوگا

پوری غزل دیکھیں

ریختہ بلاگ

پسندیدہ ویڈیو
This video is playing from YouTube

عمیر نجمی

Galat Kar Rahi Ho Chun Ke Mujhe | Umair Najmi Ki Shayari | Rekhta Studio

ویڈیو شیئر کیجیے

ای-کتابیں

اقبال دلہن

بشیر الدین احمد دہلوی 

1908 اخلاقی کہانی

کلیات انور شعور

انور شعور 

2015 کلیات

مغل تہذیب

محبوب اللہ مجیب 

1965

اودھوت کا ترانہ

 

1958 نظم

شمارہ نمبر۔002

ڈاکٹر محمد حسن 

1970 عصری ادب

مزید ای- کتابیں