aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بھاگنے کا کوئی رستہ نہیں رہنے دیتے

احمد مشتاق

بھاگنے کا کوئی رستہ نہیں رہنے دیتے

احمد مشتاق

MORE BYاحمد مشتاق

    بھاگنے کا کوئی رستہ نہیں رہنے دیتے

    کوئی در کوئی دریچہ نہیں رہنے دیتے

    آسماں پر سے مٹا دیتے ہیں تاروں کا سراغ

    ریت پر نقش کف پا نہیں رہنے دیتے

    کوئی تصویر مکمل نہیں ہونے پاتی

    دھوپ دیتے ہیں تو سایا نہیں رہنے دیتے

    پہلے بھر دیتے ہیں سامان دو عالم دل میں

    پھر کسی شے کی تمنا نہیں رہنے دیتے

    شہر کوراں میں بھی آئینہ فروش آتے ہیں

    بے تجلی کوئی قریہ نہیں رہنے دیتے

    طور سینا ہو کہ آتش کدہ سوز نہاں

    راکھ رہ جاتی ہے شعلہ نہیں رہنے دیتے

    مأخذ:

    Auraaq-e-Khezani (Pg. 23)

    • مصنف: Ahmad Mushtaq
      • اشاعت: 2015
      • ناشر: Rekhta Foundation
      • سن اشاعت: 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے