Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

قدرت حق ہے صباحت سے تماشا ہے وہ رخ

حیدر علی آتش

قدرت حق ہے صباحت سے تماشا ہے وہ رخ

حیدر علی آتش

MORE BYحیدر علی آتش

    قدرت حق ہے صباحت سے تماشا ہے وہ رخ

    خال مشکیں دل فرعوں ید بیضا ہے وہ رخ

    نور جو اس میں ہے خورشید میں وہ نور کہاں

    یہ اگر حسن کا چشمہ ہے تو دریا ہے وہ رخ

    پھوٹے وہ آنکھ جو دیکھے نگہ بد سے اسے

    آئینہ سے دل عارف کے مصفا ہے وہ رخ

    بزم عالم ہے توجہ سے اسی کے آباد

    شہر ویراں ہے اگر جانب صحرا ہے وہ رخ

    سامری چشم فسوں گر کی فسوں سازی سے

    لب جاں بخش کے ہونے سے مسیحا ہے وہ رخ

    دم نظارہ لڑے مرتے ہیں عاشق اس پر

    دولت حسن کے پیش آنے سے دنیا ہے وہ رخ

    سایہ کرتے ہیں ہما اڑ کے پروں سے اپنے

    تیرے رخسار سے دلچسپ ہو عنقا ہے وہ رخ

    گل غلط لالہ غلط مہر غلط ماہ غلط

    کوئی ثانی نہیں لا ثانی ہے یکتا ہے وہ رخ

    کون سا اس میں تکلف نہیں پاتے ہر چند

    نہ مرصع نہ مذہب نہ مطلا ہے وہ رخ

    خال ہندو ہیں پرستش کے لیے آئے ہیں

    پتلیاں آنکھوں کی دو بت ہیں کلیسا ہے وہ رخ

    کون سا دل ہے جو دیوانہ نہیں ہے اس کا

    خط شب رنگ سے سرمایۂ سودا ہے وہ رخ

    اس کے دیدار کی کیوں کر نہ ہوں آنکھیں مشتاق

    دل ربا شے ہے عجب صورت زیبا ہے وہ رخ

    تا کجا شرح کروں حسن کے اس کے آتشؔ

    مہر ہے ماہ ہے جو کچھ ہے تماشا ہے وہ رخ

    مأخذ :
    • کتاب : https://rekhta.org/ebooks/kulliyat-e-aatish-haidar-ali-aatish-ebooks?lang=Ur (Pg. Kulliyat-e-Khwaja Haidar Ali Aatish)
    • Author : Haidar Ali Aatish
    • مطبع : Munshi Nawal Kishor, Lucknow
    • اشاعت : 114

    موضوعات

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے