aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ادھر چراغ جل گئے ادھر چراغ جل گئے

اخلاق بندوی

ادھر چراغ جل گئے ادھر چراغ جل گئے

اخلاق بندوی

MORE BYاخلاق بندوی

    ادھر چراغ جل گئے ادھر چراغ جل گئے

    جدھر جدھر اٹھی تری نظر چراغ جل گئے

    یہ اور بات رات بھر کا طے نہ کر سکے سفر

    مگر یہ کم نہیں کہ وقت پر چراغ جل گئے

    ہوا کا ایسا زور تھا کہ اک بلا کا شور تھا

    اسی فضا میں جو تھے با ہنر چراغ جل گئے

    ہے بات یوں تو رات کی مگر نہ احتیاط کی

    تو کیا کرو گے دفعتاً اگر چراغ جل گئے

    جو ساتھ صبح سے چلے وہ سارے لوگ دن ڈھلے

    اسی طرف کو ہو لئے جدھر چراغ جل گئے

    وہ تیرگی کا جال تھا کہ اب سفر محال تھا

    ہوا یہ تیرے نام کا اثر چراغ جل گئے

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے