ایک آئینہ رو بہ رو ہے ابھی

ادا جعفری

ایک آئینہ رو بہ رو ہے ابھی

ادا جعفری

MORE BYادا جعفری

    ایک آئینہ رو بہ رو ہے ابھی

    اس کی خوشبو سے گفتگو ہے ابھی

    وہی خانہ بدوش امیدیں

    وہی بے صبر دل کی خو ہے ابھی

    دل کے گنجان راستوں پہ کہیں

    تیری آواز اور تو ہے ابھی

    زندگی کی طرح خراج طلب

    کوئی درماندہ آرزو ہے ابھی

    بولتے ہیں دلوں کے سناٹے

    شور سا یہ جو چار سو ہے ابھی

    زرد پتوں کو لے گئی ہے ہوا

    شاخ میں شدت نمو ہے ابھی

    ورنہ انسان مر گیا ہوتا

    کوئی بے نام جستجو ہے ابھی

    ہم سفر بھی ہیں رہ گزر بھی ہے

    یہ مسافر ہی کو بہ کو ہے ابھی

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی,

    عذرا نقوی

    ایک آئینہ رو بہ رو ہے ابھی عذرا نقوی

    مأخذ :
    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 32)
    • کتاب : Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے