ہم انہیں وہ ہمیں بھلا بیٹھے

خمارؔ بارہ بنکوی

ہم انہیں وہ ہمیں بھلا بیٹھے

خمارؔ بارہ بنکوی

MORE BYخمارؔ بارہ بنکوی

    ہم انہیں وہ ہمیں بھلا بیٹھے

    دو گنہ گار زہر کھا بیٹھے

    حال غم کہہ کے غم بڑھا بیٹھے

    تیر مارے تھے تیر کھا بیٹھے

    آندھیو جاؤ اب کرو آرام

    ہم خود اپنا دیا بجھا بیٹھے

    جی تو ہلکا ہوا مگر یارو

    رو کے ہم لطف غم گنوا بیٹھے

    بے سہاروں کا حوصلہ ہی کیا

    گھر میں گھبرائے در پہ آ بیٹھے

    جب سے بچھڑے وہ مسکرائے نہ ہم

    سب نے چھیڑا تو لب ہلا بیٹھے

    ہم رہے مبتلائے دیر و حرم

    وہ دبے پاؤں دل میں آ بیٹھے

    اٹھ کے اک بے وفا نے دے دی جان

    رہ گئے سارے با وفا بیٹھے

    حشر کا دن ابھی ہے دور خمارؔ

    آپ کیوں زاہدوں میں جا بیٹھے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    خمارؔ بارہ بنکوی

    خمارؔ بارہ بنکوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے