aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

زخموں کے نئے پھول کھلانے کے لئے آ

کلیم عاجز

زخموں کے نئے پھول کھلانے کے لئے آ

کلیم عاجز

MORE BYکلیم عاجز

    زخموں کے نئے پھول کھلانے کے لئے آ

    پھر موسم گل یاد دلانے کے لئے آ

    مستی لئے آنکھوں میں بکھیرے ہوئے زلفیں

    آ پھر مجھے دیوانہ بنانے کے لئے آ

    اب لطف اسی میں ہے مزا ہے تو اسی میں

    آ اے مرے محبوب ستانے کے لئے آ

    آ رکھ دہن زخم پہ پھر انگلیاں اپنی

    دل بانسری تیری ہے بجانے کے لئے آ

    ہاں کچھ بھی تو دیرینہ محبت کا بھرم رکھ

    دل سے نہ آ دنیا کو دکھانے کے لئے آ

    مانا کہ مرے گھر سے عداوت ہی تجھے ہے

    رہنے کو نہ آ آگ لگانے کے لئے آ

    پیارے تری صورت سے بھی اچھی ہے جو تصویر

    میں نے تجھے رکھی ہے دکھانے کے لئے، آ

    آشفتہ کہے ہے کوئی دیوانہ کہے ہے

    میں کون ہوں دنیا کو بتانے کے لئے آ

    کچھ روز سے ہم شہر میں رسوا نہ ہوئے ہیں

    آ پھر کوئی الزام لگانے کے لئے آ

    اب کے جو وہ آ جائے تو عاجزؔ اسے لے کر

    محفل میں غزل اپنی سنانے کے لئے آ

    مأخذ :
    • کتاب : Jab Fasl-e-baharn aai thi (Pg. 279)
    • Author : padm Shri Dr. Kaleem Ahmed Aajiz
    • مطبع : Sunrise Plastic Works, Patna (1990)
    • اشاعت : 1990

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے