روز خوابوں میں نئے رنگ بھرا کرتا تھا

نظیر باقری

روز خوابوں میں نئے رنگ بھرا کرتا تھا

نظیر باقری

MORE BYنظیر باقری

    روز خوابوں میں نئے رنگ بھرا کرتا تھا

    کون تھا جو مری آنکھوں میں رہا کرتا تھا

    انگلیاں کاٹ کے وہ اپنے لہو سے اکثر

    پھول پتوں پہ مرا نام لکھا کرتا تھا

    کیسا قاتل تھا جو ہاتھوں میں لیے تھا خنجر

    چپکے چپکے مرے جینے کی دعا کرتا تھا

    ہائے قسمت کہ یہی چھوڑ کے جانے والا

    عمر بھر ساتھ نباہیں گے کہا کرتا تھا

    پھول سا جسم سلگتے ہوئے صندل کی طرح

    دل کے مندر میں سر شام جلا کرتا تھا

    وہ جو اک لمحہ کسی یاد میں کٹتا تھا نظیرؔ

    دل کے جلتے ہوئے شعلوں کو ہوا کرتا تھا

    مأخذ :
    • کتاب : Etemaad (Pg. 40)

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے