پہلا سا وہ زور نہیں ہے میرے دکھ کی صداؤں میں

بشیر بدر

پہلا سا وہ زور نہیں ہے میرے دکھ کی صداؤں میں

بشیر بدر

MORE BYبشیر بدر

    پہلا سا وہ زور نہیں ہے میرے دکھ کی صداؤں میں

    شاید پانی نہیں رہا ہے اب پیاسے دریاؤں میں

    جس بادل کی آس میں جوڑے کھول لیے ہیں سہاگن نے

    وہ پربت سے ٹکرا کر برس چکا صحراؤں میں

    جانے کب تڑپے اور چمکے سونی رات کو پھر ڈس جائے

    مجھ کو ایک روپہلی ناگن بیٹھی ملی ہے گھٹاؤں میں

    پتہ تو آخر پتہ تھا گنجان گھنے درختوں نے

    زمیں کو تنہا چھوڑ دیا ہے اتنی تیز ہواؤں میں

    دن بھر دھوپ کی طرح سے ہم چھائے رہتے ہیں دنیا پر

    رات ہوئی تو سمٹ کے آ جاتے ہیں دل کی گپھاؤں میں

    کھڑے ہوئے جو ساحل پر تو دل میں پلکیں بھیگ گئیں

    شاید آنسو چھپے ہوئے ہوں صبح کی نرم ہواؤں میں

    غزل کے مندر میں دیوانہ مورت رکھ کر چلا گیا

    کون اسے پہلے پوجے گا بحث چلی دیوتاؤں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے