aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

وہ محفلیں وہ مصر کے بازار کیا ہوئے

ظہیر کاشمیری

وہ محفلیں وہ مصر کے بازار کیا ہوئے

ظہیر کاشمیری

MORE BYظہیر کاشمیری

    وہ محفلیں وہ مصر کے بازار کیا ہوئے

    اے شہر دل ترے در و دیوار کیا ہوئے

    ڈسنے لگی ہیں ہم کو زمانے کی رونقیں

    ہم جرم عاشقی کے سزا وار کیا ہوئے

    اتنی گریز پا تو نہ تھی عمر دوستی

    اے خندۂ خفی ترے اقرار کیا ہوئے

    پھولوں نے بڑھ کے پاؤں میں زنجیر ڈال دی

    وارفتگی میں مائل گلزار کیا ہوئے

    جن کا جمال جنت قلب و نظر رہا

    وہ ہم نشیں وہ یار طرح دار کیا ہوئے

    ہم اس طرح تو یوسف بے کارواں نہ تھے

    اے دل تو ہی بتا ترے غم خوار کیا ہوئے

    امید وصل یار میں شب کاٹ دی تو کیا

    دن ڈھل گیا تو نیند سے بیدار کیا ہوئے

    آنے سے ان کے ڈوبتی نبضیں سنبھل گئیں

    آسان مرحلے مرے دشوار کیا ہوئے

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے