اے مری جان آرزو مانع التفات کیا

ظہیر احمد تاج

اے مری جان آرزو مانع التفات کیا

ظہیر احمد تاج

MORE BYظہیر احمد تاج

    اے مری جان آرزو مانع التفات کیا

    ہوگا نہ وقف دل کبھی کیف تبسمات کیا

    مست نظر اگر نہیں ساغر دل میں بادہ ریز

    بزم نوازشات کیا دور توجہات کیا

    کب سے ہیں رند منتظر چشم کرم پہ ہے نظر

    شوخ نگاہ کے لیے وجہ تکلفات کیا

    ڈھونڈتی پھرتی ہے نظر شاہد بزم ناز کو

    اس کو مگر خبر نہیں کیف تصورات کیا

    حسن طلب یہ ہے کہ تو اس سے اسی کو مانگ لے

    اس کے سوا حیات کیا مقصد کائنات کیا

    اپنے ہی دل کی بزم میں اس کا جمال دیکھیے

    دیدۂ شوق کے لیے اور حریم ذات کیا

    شوق و طلب سے تاجؔ اب عالم اضطراب ہے

    ایک ذرا سے دل میں یہ شورش کائنات کیا

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے