aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

تھے نوالے موتیوں کے جن کے کھانے کے لیے

لالہ مادھو رام جوہر

تھے نوالے موتیوں کے جن کے کھانے کے لیے

لالہ مادھو رام جوہر

MORE BYلالہ مادھو رام جوہر

    تھے نوالے موتیوں کے جن کے کھانے کے لیے

    پھرتے ہیں محتاج وہ اک دانے دانے کے لیے

    شمع جلواتے ہیں غیروں سے وہ میری قبر پر

    یہ نئی صورت نکالی ہے جلانے کے لیے

    دیر جاتا ہوں کبھی کعبہ کبھی سوئے کنشت

    ہر طرف پھرتا ہوں تیرے آستانے کے لیے

    ہاتھ میں لے کر گلوری مجھ کو دکھلا کر کہا

    منہ تو بنوائے کوئی اس پان کھانے کے لیے

    اے فلک اچھا کیا انصاف تو نے واہ واہ

    رنج میرے واسطے راحت زمانے کے لیے

    مأخذ:

    Intekhab Kalam Lala M.R Jauhar (Pg. 76)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے