aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

اس کو میرے افسانے میں کیا جانے کیا بات ملی

عقیل نعمانی

اس کو میرے افسانے میں کیا جانے کیا بات ملی

عقیل نعمانی

MORE BYعقیل نعمانی

    اس کو میرے افسانے میں کیا جانے کیا بات ملی

    چاند سے رخ پر غم کے بادل آنکھوں میں برسات ملی

    بس اتنی سی بات تھی اس کی زلف ذرا لہرائی تھی

    خوف زدہ ہر شام کا منظر سہمی سی ہر رات ملی

    دولت اور شہرت لوگوں نے قسمت سے آگے پائی

    اور مصیبت بھی ہم کو تو بس حسب اوقات ملی

    وہ جس کو کچھ فکر نہیں ہے ہر غم سے انجان ہے جو

    پگ پگ اس کی راہ گزر میں اشکوں کی بارات ملی

    سب امیدیں ٹوٹ چکی تھیں دل تھا محو یاس عقیلؔ

    اور دامن تھا پرزے پرزے جب ہم کو خیرات ملی

    مأخذ:

    پرواز کا موسم (Pg. 96)

    • مصنف: عقیل نعمانی
      • ناشر: عقیل نعمانی
      • سن اشاعت: 1991

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے