aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

آیا نہیں جو کر کر اقرار ہنستے ہنستے

نظیر اکبرآبادی

آیا نہیں جو کر کر اقرار ہنستے ہنستے

نظیر اکبرآبادی

MORE BYنظیر اکبرآبادی

    آیا نہیں جو کر کر اقرار ہنستے ہنستے

    جل دے گیا ہے شاید عیار ہنستے ہنستے

    اتنا نہ ہنس دل اس سے ایسا نہ ہو کہ چنچل

    لڑنے کو تجھ سے ہووے تیار ہنستے ہنستے

    لے کر صریح دل کو وہ گل عذار یارو

    ظاہر کرے ہے کیا کیا انکار ہنستے ہنستے

    ہنس ہنس کے چھیڑ اس کو زنہار تو نہ اے دل

    ہوگا گلے کا تیرے یہ ہار ہنستے ہنستے

    ہنسنے کی آن دکھلا لیتا ہے دل کو گل رو

    کرتا ہے شوخ یارو بے کار ہنستے ہنستے

    جھنجھلا کے حال دل کا کہنا نہیں روا ہے

    لائق یہاں تو کرنا انکار ہنستے ہنستے

    دستار سرخ سج کر طرہ زری کا رکھ کر

    آیا جو دل کو لینے دل دار ہنستے ہنستے

    آنکھیں لڑا کے اس نے ہنس کر نگہ کی ایسی

    جو لے گیا دل آخر خونخوار ہنستے ہنستے

    آیا ہے دیکھنے کو تیرے نظیرؔ اے گل

    دکھلا دے ٹک تو اس کو دیدار ہنستے ہنستے

    مأخذ:

    Kulliyat-e-Nazeer (Pg. 468)

    • مصنف: نظیر اکبرآبادی
      • اشاعت: 1976
      • ناشر: رام نرائن لال بینی مادھو، الہٰ آباد
      • سن اشاعت: 1976

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے