aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

گلے سے دل کے رہی یوں ہے زلف یار لپٹ

نظیر اکبرآبادی

گلے سے دل کے رہی یوں ہے زلف یار لپٹ

نظیر اکبرآبادی

MORE BYنظیر اکبرآبادی

    گلے سے دل کے رہی یوں ہے زلف یار لپٹ

    کہ جوں سپیرے کی گردن میں جائے مار لپٹ

    مزے اٹھاتے کمر بند کی طرح سے اگر

    کمر سے یار کی جاتے ہم ایک بار لپٹ

    ہمارے پاس وہ آیا تو کھول کر آغوش

    یہ چاہا جاویں ہم اس سے بہ انکسار لپٹ

    وہیں وہ دور سرک کر عتاب سے بولا

    ہمارے ساتھ نہ ہو کر تو بے قرار لپٹ

    ہمیں جو چاہیں تو لپٹیں نظیرؔ اب ورنہ

    تو چاہے لپٹے سو ممکن نہیں ہزار لپٹ

    مأخذ:

    Kulliyat-e-Nazeer (Pg. 70(183))

    • مصنف: نظیر اکبرآبادی
      • ناشر: منشی نول کشور، لکھنؤ
      • سن اشاعت: 1951

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے