Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

طویل راتوں کی خامشی میں مری فغاں تھک کے سو گئی ہے

احمد راہی

طویل راتوں کی خامشی میں مری فغاں تھک کے سو گئی ہے

احمد راہی

MORE BYاحمد راہی

    طویل راتوں کی خامشی میں مری فغاں تھک کے سو گئی ہے

    تمہاری آنکھوں نے جو کہی تھی وہ داستاں تھک کے سو گئی ہے

    گلا نہیں تجھ سے زندگی کے وہ زاویے ہی بدل چکے ہیں

    مری وفا وہ ترے تغافل کی نوحہ خواں تھک کے سو گئی ہے

    مرے خیالوں میں آج بھی خواب عہد رفتہ کے جاگتے ہیں

    تمہارے پہلو میں کاہش یاد آستاں تھک کے سو گئی ہے

    سحر کی امید اب کسے ہے سحر کی امید ہو بھی کیسے

    کہ زیست امید و نا امیدی کے درمیاں تھک کے سو گئی ہے

    نہ جانے میں کس ادھیڑ بن میں الجھ گیا ہوں کہ مجھ کو راہیؔ

    خبر نہیں کچھ وہ آرزوئے سکوں کہاں تھک کے سو گئی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Rag-e-jan (Pg. 106)
    • Author : Ahmad Rahi
    • مطبع : Al-Hamd Publication (2005)
    • اشاعت : 2005

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے