ٹک ہونٹ ہلاؤں تو یہ کہتا ہے نہ بک بے

نظیر اکبرآبادی

ٹک ہونٹ ہلاؤں تو یہ کہتا ہے نہ بک بے

نظیر اکبرآبادی

MORE BYنظیر اکبرآبادی

    ٹک ہونٹ ہلاؤں تو یہ کہتا ہے نہ بک بے

    اور پاس جو بیٹھوں تو سناتا ہے سرک بے

    کہتا ہوں کبھی گھر میں مرے آ تو ہے کہتا

    چوکھٹ پہ ہماری کوئی دن سر تو پٹک بے

    جب بدر نکلتا ہے تو کہتا ہے وہ مغرور

    کہہ دو اسے یاں آن کے اتنا نہ چمک بے

    پردہ جو الٹ دوں گا ابھی منہ سے تو دم میں

    اڑ جائے گی چہرے کی ترے سب یہ جھمک بے

    سب بانکپن اب تیرا نظیرؔ عشق نے کھویا

    کیا ہو گئی سچ کہہ وہ تیری دوت دبک بے

    مأخذ :
    • Deewan-e-Nazeer Akbarabadi

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے