Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

وصل میں رفتار معشوقانہ دکھلاتی ہے نیند

خواجہ محمد وزیر

وصل میں رفتار معشوقانہ دکھلاتی ہے نیند

خواجہ محمد وزیر

MORE BYخواجہ محمد وزیر

    وصل میں رفتار معشوقانہ دکھلاتی ہے نیند

    آج کن اٹکھیلیوں سے آنکھوں میں آتی ہے نیند

    یاد چشم سرمگیں میں شب کو گر آتی ہے نیند

    صورت‌ مرغ نگہ آنکھوں سے اڑ جاتی ہے نیند

    فرقت‌ دل دار میں سہواً اگر آتی ہے نیند

    آنکھ سے باہر ہی باہر آ کے پھر جاتی ہے نیند

    عین بے ہوشی ہے ہشیاری نہ سمجھا چاہئے

    اہل غفلت کی تو بیداری بھی کہلاتی ہے نیند

    کروٹیں لے لے کے کہتے ہیں شب فرقت میں ہم

    کس طرح اے خفتگان خاک آ جاتی ہے نیند

    ان کی فرقت میں نہ پوچھو سرگزشت خواب چشم

    آج کل پائے نگہ کی ٹھوکریں کھاتی ہے نیند

    سبزۂ خوابیدہ گلشن کا جب آتا ہے ذکر

    تب قفس میں کوئی دم بلبل کو آ جاتی ہے نیند

    فرقت‌ دل دار میں سونے کو مرنا کہتے ہیں

    عاشقوں میں خواب مرگ ایسے ہی کہلاتی ہے نیند

    نیند کو بھی نیند آ جاتی ہے ہجر یار میں

    چھوڑ کر بے خواب مجھ کو آپ سو جاتی ہے نیند

    کہتے ہیں سونا اسے چونکا نہ روز حشر تک

    اس ہماری بخت خفتہ کی قسم کھاتی ہے نیند

    کیا غلط سمجھے وہ آئے گا پھڑکتی ہے جو آنکھ

    آنکھ میں خوف شب فرقت سے تھراتی ہے نیند

    فرقت‌ دل دار میں جو رات بھر آئی نہ تھی

    وصل میں آتی ہوئی آنکھوں شرماتی ہے نیند

    منتظر رکھتی ہے غمزے کرتی ہے آتی نہیں

    او بت ترسا تری فرقت میں ترساتی ہے نیند

    کوئے جاناں سے جو اٹھتا ہوں تو سو جاتے ہیں پاؤں

    دفعتاً آنکھوں سے پاؤں میں اتر آتی ہے نیند

    گرمیٔ سوز جگر بیتاب کر دیتی ہے جب

    ٹھنڈی سانسیں ایسی بھرتا ہوں کہ آ جاتی ہے نیند

    تیغ کا پھل کھایا آب تیغ پی کر سو رہے

    کثرت آب و غذا سے واقعی آتی ہے نیند

    صورت زاہد نہ جاگو حضرت دل سو رہو

    قبلۂ من کعبۂ مقصود دکھلاتی ہے نیند

    اس مری دیوانگی پر اے جنوں پتھر پڑیں

    آنکھ کے ڈھیلے لگاتا ہوں اگر آتی ہے نیند

    واہ رے تاثیر الفت بل بے فرط اتحاد

    غش پہ غش آتے ہیں مجھ کو جب انہیں آتی ہے نیند

    سوتے ہو تو چشم‌ بددور آنکھیں رہتی ہیں کھلی

    فتنۂ بیدار کیا ایسے ہی کہلاتی ہے نیند

    ہجر میں سونے کی ایسی ہی تمنا اے وزیرؔ

    دیکھتا ہوں اس کو حسرت سے جسے آتی ہی نیند

    مأخذ :
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے