وہ جو تیرے فقیر ہوتے ہیں

عبد الحمید عدم

وہ جو تیرے فقیر ہوتے ہیں

عبد الحمید عدم

MORE BYعبد الحمید عدم

    وہ جو تیرے فقیر ہوتے ہیں

    آدمی بے نظیر ہوتے ہیں

    دیکھنے والا اک نہیں ملتا

    آنکھ والے کثیر ہوتے ہیں

    جن کو دولت حقیر لگتی ہے

    اف! وہ کتنے امیر ہوتے ہیں

    جن کو قدرت نے حسن بخشا ہو

    قدرتاً کچھ شریر ہوتے ہیں

    زندگی کے حسین ترکش میں

    کتنے بے رحم تیر ہوتے ہیں

    وہ پرندے جو آنکھ رکھتے ہیں

    سب سے پہلے اسیر ہوتے ہیں

    پھول دامن میں چند رکھ لیجے

    راستے میں فقیر ہوتے ہیں

    ہے خوشی بھی عجیب شے لیکن

    غم بڑے دل پذیر ہوتے ہیں

    اے عدمؔ احتیاط لوگوں سے

    لوگ منکر نکیر ہوتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Adm (Pg. 682)
    • Author : Khwaja Mohammad Zakariya
    • مطبع : Alhamd Publications, Lahore (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے