ماں کا خواب

علامہ اقبال

ماں کا خواب

علامہ اقبال

MORE BYعلامہ اقبال

    دلچسپ معلومات

    (حصہ اول : 1905 تک ( بانگ درا) (ماخو ذ بچوں کے ليے )

    میں سوئی جو اک شب تو دیکھا یہ خواب

    بڑھا اور جس سے مرا اضطراب

    یہ دیکھا کہ میں جا رہی ہوں کہیں

    اندھیرا ہے اور راہ ملتی نہیں

    لرزتا تھا ڈر سے مرا بال بال

    قدم کا تھا دہشت سے اٹھنا محال

    جو کچھ حوصلہ پا کے آگے بڑھی

    تو دیکھا قطار ایک لڑکوں کی تھی

    زمرد سی پوشاک پہنے ہوئے

    دیے سب کے ہاتھوں میں جلتے ہوئے

    وہ چپ چاپ تھے آگے پیچھے رواں

    خدا جانے جانا تھا ان کو کہاں

    اسی سوچ میں تھی کہ میرا پسر

    مجھے اس جماعت میں آیا نظر

    وہ پیچھے تھا اور تیز چلتا نہ تھا

    دیا اس کے ہاتھوں میں جلتا نہ تھا

    کہا میں نے پہچان کر میری جاں

    مجھے چھوڑ کر آ گئے تم کہاں

    جدائی میں رہتی ہوں میں بے قرار

    پروتی ہوں ہر روز اشکوں کے ہار

    نہ پروا ہماری ذرا تم نے کی

    گئے چھوڑ اچھی وفا تم نے کی

    جو بچے نے دیکھا مرا پیچ و تاب

    دیا اس نے منہ پھیر کر یوں جواب

    رلاتی ہے تجھ کو جدائی مری

    نہیں اس میں کچھ بھی بھلائی مری

    یہ کہہ کر وہ کچھ دیر تک چپ رہا

    دیا پھر دکھا کر یہ کہنے لگا

    سمجھتی ہے تو ہو گیا کیا اسے؟

    ترے آنسوؤں نے بجھایا اسے!

    مأخذ :
    • کتاب : کلیات اقبال (Pg. 36)
    • Author : علامہ اقبال
    • مطبع : ایجوکیشنل پبلشنگ ہاؤس،دہلی (2014)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے