آج کی رات

فیض احمد فیض

آج کی رات

فیض احمد فیض

MORE BYفیض احمد فیض

    آج کی رات ساز درد نہ چھیڑ

    دکھ سے بھرپور دن تمام ہوئے

    اور کل کی خبر کسے معلوم

    دوش و فردا کی مٹ چکی ہیں حدود

    ہو نہ ہو اب سحر کسے معلوم

    زندگی ہیچ! لیکن آج کی رات

    ایزدیت ہے ممکن آج کی رات

    آج کی رات ساز درد نہ چھیڑ

    اب نہ دہرا فسانہ ہائے الم

    اپنی قسمت پہ سوگوار نہ ہو

    فکر فردا اتار دے دل سے

    عمر رفتہ پہ اشک بار نہ ہو

    عہد غم کی حکایتیں مت پوچھ

    ہو چکیں سب شکایتیں مت پوچھ

    آج کی رات ساز درد نہ چھیڑ

    مأخذ :
    • کتاب : Nuskha Hai Wafa (Kulliyat-e-Faiz) (Pg. 49)
    • مطبع : Educational Publishing House (2009)
    • اشاعت : 2009

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے