aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

اندیشے مجھے نگل رہے ہیں

اختر رضا سلیمی

اندیشے مجھے نگل رہے ہیں

اختر رضا سلیمی

MORE BYاختر رضا سلیمی

    اندیشے مجھے نگل رہے ہیں

    کیوں درد ہی پھول پھل رہے ہیں

    دیکھو مری آنکھ بجھ رہی ہے

    دیکھو مرے خواب جل رہے ہیں

    اک آگ ہماری منتظر ہے

    اک آگ سے ہم نکل رہے ہیں

    جسموں سے نکل رہے ہیں سائے

    اور روشنی کو نگل رہے ہیں

    یہ بات بھی لکھ لے اے مؤرخ

    ملبے سے قلم نکل رہے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے