aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

دکھی دلوں کے لیے تازیانہ رکھتا ہے

انجم رومانی

دکھی دلوں کے لیے تازیانہ رکھتا ہے

انجم رومانی

MORE BYانجم رومانی

    دکھی دلوں کے لیے تازیانہ رکھتا ہے

    ہر ایک شخص یہاں اک فسانہ رکھتا ہے

    کسی بھی حال میں راضی نہیں ہے دل ہم سے

    ہر اک طرح کا یہ کافر بہانہ رکھتا ہے

    ازل سے ڈھنگ ہیں دل کے عجیب سے شاید

    کسی سے رسم و رہ غائبانہ رکھتا ہے

    کوئی تو فیض ہے کوئی تو بات ہے اس میں

    کسی کو دوست یونہی کب زمانہ رکھتا ہے

    فقیہ شہر کی باتوں سے در گذر بہتر

    بشر ہے اور غم آب و دانہ رکھتا ہے

    معاملات جہاں کی خبر ہی کیا اس کو

    معاملہ ہی کسی سے رکھا نہ رکھتا ہے

    ہمیں نے آج تک اپنی طرف نہیں دیکھا

    توقعات بہت کچھ زمانہ رکھتا ہے

    قلندری ہے کہ رکھتا ہے دل غنی انجمؔ

    کوئی دکاں نہ کوئی کارخانہ رکھتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے