اس قدر اب غم دوراں کی فراوانی ہے

مصطفی زیدی

اس قدر اب غم دوراں کی فراوانی ہے

مصطفی زیدی

MORE BYمصطفی زیدی

    اس قدر اب غم دوراں کی فراوانی ہے

    تو بھی منجملۂ اسباب پریشانی ہے

    مجھ کو اس شہر سے کچھ دور ٹھہر جانے دو

    میرے ہمراہ مری بے سر و سامانی ہے

    آنکھ جھک جاتی ہے جب بند قبا کھلتے ہیں

    تجھ میں اٹھتے ہوئے خورشید کی عریانی ہے

    اک ترا لمحۂ اقرار نہیں مر سکتہ

    اور ہر لمحہ زمانے کی طرح فانی ہے

    کوچۂ دوست سے آگے ہے بہت دشت جنوں

    عشق والوں نے ابھی خاک کہاں چھانی ہے

    اس طرح ہوش گنوانا بھی کوئی بات نہیں

    اور یوں ہوش سے رہنے میں بھی نادانی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Mustafa Zaidi(Qaba-e-Saaz) (Pg. 72)
    • Author : Mustafa Zaidi
    • مطبع : Alhamd Publications (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے