Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

قضا سے قرض کس مشکل سے لی عمر بقا ہم نے

عبد العزیز خالد

قضا سے قرض کس مشکل سے لی عمر بقا ہم نے

عبد العزیز خالد

MORE BYعبد العزیز خالد

    قضا سے قرض کس مشکل سے لی عمر بقا ہم نے

    متاع زندگی دے کر کیا یہ قرض ادا ہم نے

    ہمیں کس خواب سے للچائے گی یہ پر فسوں دنیا

    کھرچ ڈالا ہے لوح دل سے حرف مدعا ہم نے

    کریں لب کو نہ آلودہ کبھی حرف شکایت سے

    شعار اپنا بنایا شیوۂ صبر و رضا ہم نے

    ہم اس کے ہیں سراپا ادبدا کر اس سے کیا مانگیں

    اٹھایا ہے کبھی اے مدعی دست دعا ہم نے

    شہیدان وفا کی منقبت لکھتے رہے لیکن

    نہ کی عرضی خداؤں کی کبھی حمد و ثنا ہم نے

    پرکھنے والے پرکھیں گے اسی معیار پر ہم کو

    جہاں سے کیا لیا ہم نے جہاں کو کیا دیا ہم نے

    وہی انساں جہاں جاؤ وہی حرماں جدھر دیکھو

    بپائے خفتہ کی سیاحیٔ ملک خدا ہم نے

    لٹا ذوق سفر بھی کارواں کا ایسے لگتا ہے

    سنا ہر تازہ پیش آہنگ کا شور درا ہم نے

    ستم آراؤ سن لو آخری برداشت کی حد تک

    سہا ہر ناروا ہم نے سنا ہر ناسزا ہم نے

    یہ دزدیدہ نگاہیں ہیں کہ دل لینے کی راہیں ہیں

    ہمیشہ دیدہ و دانستہ کھائی ہے خطا ہم نے

    کشاکش ہم سے پوچھے کوئی نا آسودہ خواہش کی

    حسینوں سے بہت باندھے ہیں پیمان وفا ہم نے

    کیا تکمیل نقش نا تمام شوق کی خاطر

    جو تم سے ہو سکا تم نے جو ہم سے ہو سکا ہم نے

    عراقیؔ کی طرح خالدؔ کو کیوں بدنام کرتے ہیں

    نہ دیکھا کوئی ایسا خوش نوائے بے نوا ہم نے

    مأخذ :
    • کتاب : sarab-e-sahil (Pg. 53)
    • Author : Abdul Aziz Khalid
    • مطبع : Maqbool Acedami, Lahore (2010)
    • اشاعت : 2010
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے