سوال کا جواب تھا جواب کے سوال میں

عبد الاحد ساز

سوال کا جواب تھا جواب کے سوال میں

عبد الاحد ساز

MORE BYعبد الاحد ساز

    سوال کا جواب تھا جواب کے سوال میں

    گرفت شور سے چھٹے تو خامشی کے جال میں

    برا ہو آئینے ترا میں کون ہوں نہ کھل سکا

    مجھی کو پیش کر دیا گیا مری مثال میں

    بقا طلب تھی زندگی شفا طلب تھا زخم دل

    فنا مگر لکھی گئی ہے باب اندمال میں

    کہیں ثبات ہے نہیں یہ کائنات ہے نہیں

    مگر امید دید میں تصور جمال میں

    قدیم سے ہٹے تو ہم جدید میں الجھ گئے

    نکل کے گردش فلک سے موسموں کے جال میں

    مأخذ :
    • کتاب : khamoshi bol uthi hai (Pg. 66)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے