aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

یادوں کی جاگیر نہ ہوتی تو میں یارو کیا کرتا

افضل ہزاروی

یادوں کی جاگیر نہ ہوتی تو میں یارو کیا کرتا

افضل ہزاروی

MORE BYافضل ہزاروی

    یادوں کی جاگیر نہ ہوتی تو میں یارو کیا کرتا

    گر اس کی تصویر نہ ہوتی تو میں یارو کیا کرتا

    اس کے دم سے رانجھا تھا میں وہ ہی مری پہچان بنی

    وہ گر میری ہیر نہ ہوتی تو میں یارو کیا کرتا

    قائل کرنا کام تھا مشکل پر وہ قائل ہو ہی گیا

    لہجے میں تاثیر نہ ہوتی تو میں یارو کیا کرتا

    میرا کام تمام تھا ورنہ اس کے نیک ارادے سے

    ہاتھوں میں شمشیر نہ ہوتی تو میں یارو کیا کرتا

    اندر سے میں ٹوٹا پھوٹا ایک کھنڈر ویرانہ تھا

    ظاہر جو تعمیر نہ ہوتی تو میں یارو کیا کرتا

    ظلمت شب میں روشن افضلؔ اک ننھا سا جگنو تھا

    اتنی بھی تنویر نہ ہوتی تو میں یارو کیا کرتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے