یہ ساقی کی کرامت ہے کہ فیض مے پرستی ہے

بیدم شاہ وارثی

یہ ساقی کی کرامت ہے کہ فیض مے پرستی ہے

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    یہ ساقی کی کرامت ہے کہ فیض مے پرستی ہے

    گھٹا کے بھیس میں مے خانے پر رحمت برستی ہے

    یہ جو کچھ دیکھتے ہیں ہم فریب خواب ہستی ہے

    تخیل کے کرشمے ہیں بلندی ہے نہ پستی ہے

    وہاں ہیں ہم جہاں بیدمؔ نہ ویرانہ نہ بستی ہے

    نہ پابندی نہ آزادی نہ ہشیاری نہ مستی ہے

    تری نظروں پہ چڑھنا اور ترے دل سے اتر جانا

    محبت میں بلندی جس کو کہتے ہیں وہ پستی ہے

    وہی ہم تھے کبھی جو رات دن پھولوں میں تلتے تھے

    وہی ہم ہیں کہ تربت چار پھولوں کو ترستی ہے

    کرشمے ہیں کہ نقاش ازل نیرنگیاں تیری

    جہاں میں مائل رنگ فنا ہر نقش ہستی ہے

    اسے بھی ناوک جاناں تو اپنے ساتھ لیتا جا

    کہ میری آرزو دل سے نکلنے کو ترستی ہے

    ہر اک ذرے میں ہے انی انا اللہ کی صدا ساقی

    عجب میکش تھے جن کی خاک میں بھی جوش مستی ہے

    خدا رکھے دل پر سوز تیری شعلہ افشانی

    کہ تو وہ شمع ہے جو رونق دربار ہستی ہے

    مرے دل کے سوا تو نے بھی دیکھی بیکسی میری

    کہ آبادی نہ ہو جس میں کوئی ایسی بھی بستی ہے

    حجابات تعین مانع دیدار سمجھا تھا

    جو دیکھا تو نقاب روئے جاناں میری ہستی ہے

    عجب دنیائے حیرت عالم گور غریباں ہے

    کہ ویرانے کا ویرانہ ہے اور بستی کی بستی ہے

    کہیں ہے عبد کی دھن اور کہیں شور انا الحق ہے

    کہیں اخفائے مستی ہے کہیں اظہار مستی ہے

    بنایا رشک مہر و مہ تری ذرہ نوازی نے

    نہیں تو کیا ہے بیدمؔ اور کیا بیدمؔ کی ہستی ہے

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY