خواب گل رنگ کے انجام پہ رونا آیا

شکیب جلالی

خواب گل رنگ کے انجام پہ رونا آیا

شکیب جلالی

MORE BYشکیب جلالی

    دلچسپ معلومات

    مارچ 1953

    خواب گل رنگ کے انجام پہ رونا آیا

    آمد صبح شب اندام پہ رونا آیا

    دل کا مفہوم اشاروں سے اجاگر نہ ہوا

    بے کسئ گلۂ خام پہ رونا آیا

    کبھی الفت سی جھلکتی ہے کبھی نفرت سی

    اے تعلق ترے ابہام پہ رونا آیا

    مری خوشیاں کبھی جس نام سے وابستہ تھیں

    جانے کیوں آج اسی نام پہ رونا آیا

    لے کے ابھرے گی سحر پھر وہی پژمردہ کرن

    کیا کہوں تیرگئ شام پہ رونا آیا

    بے سبب اپنی نگاہوں سے گرا جاتا ہوں

    اس فسوں کاری الزام پہ رونا آیا

    اتنے ارزاں تو نہیں تھے مرے اشکوں کے گہر

    آج کیوں تلخیٔ آلام پہ رونا آیا

    لائق حسن نظر تھے نہ کبھی ان کے خطوط

    آج محرومئ پیغام پہ رونا آیا

    اب بھی منزل مرے قدموں کی تمنائی ہے

    کیا کہوں حسرت یک گام پہ رونا آیا

    رونے والا تو کرے گا نہ کسی کا شکوہ

    لاکھ کہئے غم ایام پہ رونا آیا

    ان کے شبہات میں کچھ اور اضافہ تھا شکیبؔ

    اشک سادہ کے اس انعام پہ رونا آیا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Shakiib Jalali (Pg. 320)
    • Author : Mohd Nasir Khan
    • مطبع : Farid Book Depot Pvt. Ltd (2007)
    • اشاعت : 2007

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے