aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

جنگلوں کی یہ مہم ہے رخت جاں کوئی نہیں

حسن نعیم

جنگلوں کی یہ مہم ہے رخت جاں کوئی نہیں

حسن نعیم

MORE BYحسن نعیم

    جنگلوں کی یہ مہم ہے رخت جاں کوئی نہیں

    سنگ ریزوں کی گرہ میں کہکشاں کوئی نہیں

    کیا خبر ہے کس کنارے اس سفر کی شام ہو

    کشتئ عمر رواں میں بادباں کوئی نہیں

    عاشقوں نے صرف اپنے دکھ کو سمجھا معتبر

    مہر سب کی آرزو ہے مہرباں کوئی نہیں

    ایک دریا پار کر کے آ گیا ہوں اس کے پاس

    ایک صحرا کے سوا اب درمیاں کوئی نہیں

    حسرتوں کی آبرو تہذیب غم سے بچ گئی

    اس نفاست سے جلا ہے دل دھواں کوئی نہیں

    کٹ چکے ہیں اپنے ماضی سے سخن کے پیشہ ور

    مرثیہ گو سو چکے اور قصہ خواں کوئی نہیں

    پوچھتا ہے آج ان کا بے تکلف سا لباس

    اس گلی میں کیا جیالا نوجواں کوئی نہیں

    وہ رہے قید زماں میں جو مکین عام ہو

    لمحہ لمحہ جینے والوں کا مکاں کوئی نہیں

    مجلسوں کی خاک چھانی تو کھلا مجھ پر نعیمؔ

    اعظمی سا خوش نگاہ و خوش بیاں کوئی نہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    جنگلوں کی یہ مہم ہے رخت جاں کوئی نہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے