ملک سخن میں درد کی دولت کو کیا ہوا

افتخار عارف

ملک سخن میں درد کی دولت کو کیا ہوا

افتخار عارف

MORE BYافتخار عارف

    ملک سخن میں درد کی دولت کو کیا ہوا

    اے شہر میرؔ تیری روایت کو کیا ہوا

    ہم تو سدا کے بندۂ زر تھے ہمارا کیا

    نام آوران عہد بغاوت کو کیا ہوا

    گرد و غبار کوچۂ شہرت میں آ کے دیکھ

    آسودگان کنج قناعت کو کیا ہوا

    گھر سے نکل کے بھی وہی تازہ ہوا کا خوف

    میثاق ہجر تیری بشارت کو کیا ہوا

    RECITATIONS

    افتخار عارف

    افتخار عارف,

    افتخار عارف

    ملک سخن میں درد کی دولت کو کیا ہوا افتخار عارف

    مأخذ :
    • کتاب : Mahr-e-Do neem (Pg. 180)

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY