اک جام کھنکتا جام کہ ساقی رات گزرنے والی ہے

قتیل شفائی

اک جام کھنکتا جام کہ ساقی رات گزرنے والی ہے

قتیل شفائی

MORE BYقتیل شفائی

    اک جام کھنکتا جام کہ ساقی رات گزرنے والی ہے

    اک ہوش ربا انعام کہ ساقی رات گزرنے والی ہے

    وہ دیکھ ستاروں کے موتی ہر آن بکھرتے جاتے ہیں

    افلاک پہ ہے کہرام کہ ساقی رات گزرنے والی ہے

    گو دیکھ چکا ہوں پہلے بھی نظارہ دریا نوشی کا

    ایک اور صلائے عام کہ ساقی رات گزرنے والی ہے

    یہ وقت نہیں ہے باتوں کا پلکوں کے سائے کام میں لا

    الہام کوئی الہام کہ ساقی رات گزرنے والی ہے

    مدہوشی میں احساس کے اونچے زینے سے گر جانے دے

    اس وقت نہ مجھ کو تھام کہ ساقی رات گزرنے والی ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ذوالفقار علی بخاری

    ذوالفقار علی بخاری

    مأخذ :
    • کتاب : qatiil shifai (Pg. 28)
    • Author : qatiil shifai
    • مطبع : farid book depot(p)ltd (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے