کل ہم نے بزم یار میں کیا کیا شراب پی

احمد فراز

کل ہم نے بزم یار میں کیا کیا شراب پی

احمد فراز

MORE BYاحمد فراز

    کل ہم نے بزم یار میں کیا کیا شراب پی

    صحرا کی تشنگی تھی سو دریا شراب پی

    اپنوں نے تج دیا ہے تو غیروں میں جا کے بیٹھ

    اے خانماں خراب نہ تنہا شراب پی

    تو ہم سفر نہیں ہے تو کیا سیر گلستاں

    تو ہم سبو نہیں ہے تو پھر کیا شراب پی

    اے دل گرفتۂ غم جاناں سبو اٹھا

    اے کشتۂ جفائے زمانہ شراب پی

    اک مہرباں بزرگ نے یہ مشورہ دیا

    دکھ کا کوئی علاج نہیں جا شراب پی

    بادل گرج رہا تھا ادھر محتسب ادھر

    پھر جب تلک یہ عقدہ نہ سلجھا شراب پی

    اے تو کہ تیرے در پہ ہیں رندوں کے جمگھٹے

    اک روز اس فقیر کے گھر آ شراب پی

    دو جام ان کے نام بھی اے پیر میکدہ

    جن رفتگاں کے ساتھ ہمیشہ شراب پی

    کل ہم سے اپنا یار خفا ہو گیا فرازؔ

    شاید کہ ہم نے حد سے زیادہ شراب پی

    مأخذ :
    • کتاب :  kulliyat-e-ahmad Faraz (Pg. 222)
    • Author : Ahmad faraz
    • مطبع : Fareed book depot(pvt)ltd (2010)
    • اشاعت : 2010

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے