Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

نرگسستاں کی بھی ٹک دیکھو پھبن آئینے میں

انشا اللہ خاں انشا

نرگسستاں کی بھی ٹک دیکھو پھبن آئینے میں

انشا اللہ خاں انشا

MORE BYانشا اللہ خاں انشا

    نرگسستاں کی بھی ٹک دیکھو پھبن آئینے میں

    باغ مت جاؤ کہ ہے امن و چمن آئینے میں

    لہریں لیتا ہے پڑا مچھی بھون آئینے میں

    چوم لے تو ہی بھلا اپنا دہن آئینے میں

    راجہ نل کا جو پڑا عکس دہن آئینے میں

    تو نظر آئی اسے شکل دمن آئینے میں

    کیونکہ میں جیسے کو تیسا ہی نہ پھر آؤں نظر

    یعنی کیا معنی نہ ہو آئینہ پن آئینے میں

    مدھ پہ جوبن کے چڑھے ایسے ہی تھے وہ تو کہ بس

    آ گئے نشے میں دیکھ اپنی پھبن آئینے میں

    تیور ایسے ہی ہلاکو ہیں جو کچھ بس ہو تو وہ

    عکس آدم کو کریں گور و کفن آئینے میں

    شغل آئینہ سے لذت یہ اٹھائی ہے کہ بس

    ہم فقیروں نے کیا اپنا وطن آئینے میں

    شعلے آہوں کے بدن اپنے سے ہیں یوں ہی نمود

    منعکس جیسے ہو سورج کی کرن آئینے میں

    حوض آئینہ سے فوارہ نزاکت کا چھٹے

    رونق افزا جو ہو وہ چاہ ذقن آئینے میں

    واہ اس طفلی و اس شکل جوانی کے بدل

    سامنے ہوویں گے اک مرد کہن آئینے میں

    دیکھ کر اپنی بہار اس نے یہ انشاؔ سے کہا

    باغ میں کب ہے چمن جو ہے چمن آئینے میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے