Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

انقلاب

اعظم کریوی

انقلاب

اعظم کریوی

MORE BYاعظم کریوی

    کہانی کی کہانی

    ’’یہ امریا نام کے ایک گاؤں کی کہانی ہے، جہاں ہوائی جہاز کا کارخانہ بننے کی خوشی اور امیر بننے کی چاہت میں زمیندار اپنی زمین خوشی خوشی سرکار کو دے دیتے ہیں۔ لیکن جب کارخانہ بننا شروع ہوتا ہے تو گاؤں کے نظام میں ایسی تبدیلی ہوتی ہے کہ ان زمینداروں کی حالت مزدوروں سے بھی بدتر ہو جاتی ہے۔‘‘

    جوکھو نے چلم کا دم لگاتے ہوئے مہابیر حلوائی سے کہا، ’’اب ہمارے گاؤں میں بھی لچھمی دیوی کی کرپا ہونے والی ہے۔‘‘ مہابیر نے اپنے بوسیدہ خوانچہ پر سے مکھیاں اڑاتے ہوئے پوچھا، ’’سو کیسے‘‘ جوکھو ’’ارے کیا تم کو خبر نہیں ہے کہ ہمارے گاؤں میں ہوائی جہاز کا کارخانہ کھلنے والا ہے۔ اب تمہاری تو خوب موج رہےگی۔‘‘ مہابیر نے اپنی پرانی گڑ کی جلیبی پر حسرت سے نظر ڈالی، گزشتہ اتوار کو سیر بھر بازار سے خریدلایا تھا لیکن اب تک بکنے کی نوبت نہ آئی تھی۔ خوش ہوکر دریافت کیا، ’’میری موج کیسی رہےگی۔‘‘

    جوکھو۔ واہ تم اتنا بھی نہیں سمجھ سکتے، آج کل تم بڑی مشکل سے دن بھر میں دو پیسے کی ریوڑی یا جلیبی بیچتے ہوگے۔ گاؤں والے ان کی قدر کیا جانیں۔ مدا (مگر) جب کارخانہ بن جائےگا تو تمہاری اتنی مٹھائی بکے گی کہ بہت جلد سیٹھ بن جاؤگے۔ مہابیر نے اپنی خوشی کو دباتے ہوئے کہا، ’’سوبھیا تم بڑے مزے میں رہوگے، تاڑی کی قیمت چوگنی ہو جائےگی۔‘‘ جوکھو کلوار نے ہاتھ سے چلم رکھ دی اور بولا، ’’میں تو اب شراب کا بھی ٹھیکہ لینے والا ہوں، کل میں شہر گیا تھا وہاں داروغہ جی اور تحصیلدار صاحب نے خود مجھ سے کہا ہے کہ سیٹھ ہوائی جہاز کا کارخانہ تمہارے گاؤں میں کھلنے والا ہے۔ ہم سوائے تمہارے اور کسی کو شراب کا ٹھیکہ نہ دیں گے۔‘‘ یہ باتیں ہو ہی رہی تھیں کہ وہاں پر مہاراج گنیشی اور شبراتی میاں آ گئے، اریا کے یہ دونوں زمیندار تھے۔ مہابیر اور جوکھو نے اٹھ کر مہاراج کو پالاگن کی، اشیرباد دیکر کر مہاراج بولے، ’’یارو کیا بات کر رہے ہو۔‘‘ جوکھو مہاراج! وہی کارخانہ کی بات چیت کر رہے تھے۔

    مہاراج: معلوم نہیں کس کی زمین میں کارخانہ بنےگا۔

    جوکھو: سو یہ تو مجھے معلوم ہے کہ کارخانہ مشترکہ زمین میں بنےگا، مدا یہ سنا ہے کہ زیادہ تر زمین آپ کی چودھری گھسیٹے اور شبراتی میاں کی ہے، کچھ زمین ہربجنا بنیا کی بھی ہے۔

    مہاراج: کہیں سرکار زبردستی زمین پر قبصہ نہ کر لے۔

    مہابیر: سرکار ایسا جلم (ظلم) کبھی نہ کرے گی۔

    جوکھو: تحصیلدار صاحب تو معاوصہ دینے کو کہتے تھے کل وہ خود گاؤں میں اسی کا فیصلہ کرنے آئیں گے۔

    مہاراج: مجھ کو بھی وشواس ہے کہ معاوصہ ملےگا، چلو ذرا چودھری گھسیٹے اور بکریدی میاں سے بھی اس کا ذکر کریں۔

    جوکھو: بکریدی میاں سے کیا ذکر کرو گے، جب ان کا لڑکا شبراتی میاں آپ کے ساتھ ہے تو جو کچھ پوچھنا ہے پوچھ لو۔

    مہاراج: نہیں بھائی جب تک بکریدی میاں زندہ ہے ہم لوگ ان کے سامنے شبراتی میاں سے کچھ نہ پوچھیں گے، کیوں شبراتی میاں ٹھیک ہے نا۔

    شبراتی میاں کو دل میں تو یہ مہاراج کی بات اچھی نہ معلوم ہوئی مگر بظاہر ہاں میں ہاں ملا دی۔

    بکریدی میاں کے یہ اکلوتے لڑکے تھے، حال ہی میں اِن کی شادی ہوئی تھی۔ بکریدی میاں نے اپنی تمام جائداد شبراتی میاں ہی کے نام لکھ دی تھی۔ لیکن پھر بھی وہی سب کام کرتے تھے۔ شبراتی میاں کو زمینداری یا کاشت کاری سے کوئی سروکار نہ تھا۔

    امریا ضلع ہوشنگ آباد میں ایک چھوٹا سا گاؤں تھا۔ چودھری گھسیٹے، مہاراج گنیشی بکریدی میاں اور بجنا بنیاکی یہاں زمینداری تھی۔ ان لوگوں کو زمینداری سے تو کچھ زیادہ فائدہ نہ تھا ہاں کاشتکاری سے بخوبی بسر اوقات ہو جاتی تھی۔ جب لوگوں کو معلوم ہوا کہ وہاں پر سرکار ہوائی جہاز کا کارخانہ بنانے والی ہے تو ہل چل مچ گئی اور سب لوگ بکریدی میاں کے دروازہ پر پنچایت کرنے کے لیے جمع ہو گئے۔ جو کھو کلوار تحصیلدار سے پہلے ہی مل آیا تھا۔ تحصیلدار صاحب نے اس سے وعدہ کر لیا تھا کہ جب کارخانہ بن جائےگا تو پھر وہ جوکھو کو شراب کا ٹھیکہ دلادیں گے۔ چنانچہ اسی لالچ میں وہ گاؤں بھر کو ورغلا رہا تھا۔ جب بکریدی میاں کے دروازہ پر بہت لوگ جمع ہو گئے تو سب سے پہلے اسی نے اٹھ کر کہا، بھائیوں بڑی خوشی کی بات ہے کہ سرکار ہمارے گاؤں میں ہوائی جہاز کا کارخانہ بنانے والی ہے۔ کارخانہ بن جانے سےہم غریبوں کا بھی بڑا فائدہ ہوگا۔ جن لوگوں کو دو آنہ مزدوری بھی مشکل سے ملتی ہے اب ان کو روپیہ روز مل سکیں گے۔ دھوبی، کمہار، حلال خور، چمار، بنیا، اہیر سب ہی کا فائدہ ہوگا۔

    مہاراج گنیشی کو اپنی پڑی تھی، جھٹ سےبول اٹھے اور میرا کیا فائدہ ہوگا۔

    جوکھو اب چودھری بکریدی میاں اور ہربجنا کی زمین ہی پر تو کارخانہ بنے گا۔ معاوضہ میں سرکار روپیہ دے گی۔ایک بات اور ہے ابھی تو گاؤں میں دو چار سو آدمی ہوں گے، کارخانہ بن جانے سےہزار بارہ سو آدمی ہو جائیں گے۔ چندہ سے ایک چھوٹا سا مندر بن جائےگا اور بس آپ وہاں پر بیٹھے ہوئے ست نرائن کی کتھا کہیے گا۔ بڑی آمدنی ہوگی۔ اعتراض کی گنجائش نہ تھی۔ مستقبل کی خوشی نے مہاراج کو مال کی فکر سے آزاد کر دیا۔ لالچ نے کچھ سوچنے کا موقع بھی نہ دیا۔ خوش ہوکر بولے بھائیو جوکھو، ہے تو ان پڑھ پرنت (مگر) بات پتے کی کہتا ہے۔ کیوں چودھری تمہاری کیا رائے ہے۔ مہاراج کاگاؤں میں بڑا اثر تھا۔ چودھری نے بھی ان کی ہاں میں ہاں ملا دی۔ مہابیر حلوائی ایک طرف بیٹھا ہوا خیالی قلعہ بنا رہا تھا۔ میں خوب بڑی دوکان کھولوں گا۔ لکھنا کی اماں بہت دنوں سے گڑوا بنوانے کو کہہ رہی ہے۔ اب اس کو ضرور زیور بنوادوں گا۔ ہربجنا بنیا کی طرف دیکھ کر بولا کیوں سیٹھ تمہاری کیا رائے ہے، گڑستو اور چبینا ہی پر ہربجنا کی دوکان کا دارومدار تھا، زمینداری بہت تھوڑی تھی، زمین پرتی پڑی تھی۔ اس سے کچھ آمدنی کاسہارا تھا اس نے بھی سوچا کہ کارخانہ سے میری دوکان بھی چمک جائےگی۔ اس نے بھی رضامندی ظاہر کر دی۔ اب سب بکریدی میاں کی رائے معلوم کرنے کے لیے ان کی طرف دیکھنے لگے۔ شبراتی میاں کو نوجوان سمجھ کر کسی نے کچھ پوچھنے کی ضرورت نہ سمجھی۔ شبراتی میاں کو بہت برا معلوم ہوا اور وہ وہاں سے کھسک گئے۔

    بکریدی میاں پرانے زمانے کے آدمی تھے۔ بیوی عرصہ ہوا مر چکی تھی۔ اس کی یادگار شبراتی میاں تھے۔ اکلوتا لڑکا سب کا لاڈلا ہوتا ہے۔ چنانچہ انھوں نے بڑے ناز و نعم سے شبراتی میاں کی پرورش کی۔ پڑھانے لکھانے کی انھوں نے کچھ ضرورت نہ سمجھی کیونکہ ان کا خیال تھا کہ تھوڑی بہت زمینداری اور موروثی کاشتکاری بہت کافی ہے۔ شبراتی میاں جب سولہ برس کے ہوئے تو بکریدی میاں نے ان کی بری دھوم دھام سے شادی کردی۔ بیوی کے مرنےکے بعد بہو نےگھر کا تمام کام سنبھال لیا۔ بکریدی میاں کے گاؤں والے بڑی عزت کرتے تھے۔ جب ان کی رائے دریافت کی گئی تو وہ کھنکار کر بولے میرے خیال میں تو کارخانہ بن جانے سے ہمارا گاؤں تباہ ہو جائےگا۔

    مہاراج نے جوکھو کی طرف دیکھ کر کہا، اب بولو!

    جوکھو نے بکریدی میاں کی طرف دیکھ کر کہا واہ، بابا آپ بھی خوب کہتے ہیں۔ وجہ تو بتائی نہیں اور کہہ دیا کارخانہ سے گاؤں تباہ ہو جائےگا۔ کارخانہ تو پڑتی میں بنےگا۔ پڑتی تو فضول پڑی ہے۔ اس سے گاؤں والوں کو کوئی فائدہ نہیں ہے۔ کارخانہ بن جانے سے وہاں پر بہار آ جائےگی۔

    مہاراج نے بکریدی میاں سے ہنس کر کہا، بابا تم جوکھو کو ایسا ویسا نہ سمجھو، بڑی پتہ کی بات کہتاہے۔ آپ نے اس کو آلہا اودل پڑھتے سنا ہی ہوگا۔ رام دے اس جوار میں تو اس کا کوئی مقابلہ نہیں کر سکتا۔ سچ تو کہتا ہے کہ پڑتی سے ہمارا کیا فائدہ ہے۔

    بکریدی میاں: ابھی تو تو پڑتی ہی کا نام ہے لیکن تم سب لوگ دیکھ لوگے کہ آہستہ آہستہ آس پاس کی اچھی زمین پر بھی سرکار قبضہ کرلے گی جہاں آج لہلہاتے کھیت ہیں وہاں کل چٹیل میدان ہوگا، یہی نہیں بلکہ وہ زمانہ بھی آ جائےگا جب ہم اپنے مکانوں سے نکال دیے جائیں گے، ہمارے کچے مکانوں کو گراکر پکی عمارتیں بنائی جائیں گی لیکن اس پر دوسرے لوگ قابض ہوں گے۔ ابھی کہتے ہو کہ صرف کارخانہ بنے گا لیکن یہ تمہاری بھول ہے کارخانہ بنے گا تو اس کے ملازموں کے لیے بھی بارکیں بنائی جائیں گی اور ان کے لیے بھی زمین درکار ہوگی۔ افسروں کے لیے بنگلے بنیں گے اور ہماری ہی زمین پر قبضہ کیا جائےگا۔ ہماری بہو بیٹیاں جو آج بڑی آزادی سے کھلے منھ باہر آتی جاتی رہتی ہیں اور ان کی طرف کوئی بری نظر سے دیکھنے کی جرأت نہیں کر سکتا۔ پردیسی ان کا مذاق اڑائیں گے گھر سے باہر نکلنا دشوار ہو جائےگا تم کہتے ہو پڑتی سےہمیں کیا فائدہ ہے اس کاجواب یہ ہے کہ وہاں بڑی بڑی گھاس اگتی ہے، ڈھور ڈنگر چرتے ہیں، جب چراگاہ ہی نہ ہوگی تو مویشی کیا چارہ کھائیں گے۔

    ایک اہیر بیٹھا اونگ رہا تھا بکریدی میاں کے آخری الفاظ سن کر چوک اٹھا اور بولا تو یہ کہو کہ کارخانہ کیا بنے گا ہمارے لیے مصیبت آ جائےگی۔

    جوکھو نے دیکھا کہ معاملہ بگڑا جاتا ہے جھٹ بول اٹھا۔ ہمارے گاؤں کے چاروں طرف جنگل ہی جنگل ہے۔ کیا پڑتی ہی کی کھاس سے کام چلتا ہے۔ بابا برانہ مانو تو ایک بات کہوں سرکار نے ہی ہم کو زمین دی ہے۔ اس کاجب جی چاہے ہم سے چھین لے۔ ہمارا کچھ بس نہیں چل سکتا۔ فریاد کرنے سےکچھ فائدہ نہ ہوگا۔

    بکریدی میاں نے اداس ہوکر کہا جب یہی بات ہے تو پھر مجھ سے پوچھنے کی کیا ضرورت تھی جو تمہارے جی میں آئے کرو، لیکن میں اپنی زمین سرکار کو خوشی سے نہ دوں گا۔

    جوکھو نے کہا لیکن تمہارا کچھ بس نہ چلےگا، سرکار تم سے زمین ضرور لے گی، خوشی سے دوگے تو خیر ورنہ زبردستی چھین لےگی اور مفت میں گاؤں کی بدنامی ہوگی۔

    چودھری گھسیٹے گاؤں کے مکھیا تے، انھوں نے سوچا کہ کہیں مفت میں نہ پس جاؤں، تحصیلدار صاحب کو خبر ہو جائےگی کہ میں نے لوگوں کو بہکایا ہے تو میرے حق میں بہت برا ہوگا۔ کہنے لگے ہاں بھائیوں جو کام کرو سوچ سمجھ کر کرو ’’دریا میں رہنا مگر سے بیر‘‘ کوئی اچھی بات نہ ہوگی۔ ہم سرکار ہی کا تو کھاتے ہیں، میرے خیال میں کارخانے بننے سےہمارا کوئی نقصان نہ ہوگا بلکہ ہر طرح سے فائدہ ہی ہوگا۔ کارخانہ کھلنے سے بازار بھی لگنے لگےگا، سودا سلف خریدنے اور بیچنے میں ہر طرح کی آسانی ہوگی، ابھی تو ہفتہ میں دو دن ہمارے گاؤں میں ڈاک آتی ہے۔ کارخانہ بنتے ہی یہاں پر ڈاکخانہ بھی بن جائےگا۔ مدرسہ کھلے گا، اس میں ہمارے بچے پڑھیں گے۔

    بکریدی میاں نے کہا، یہ سب کچھ صحیح ہے مگر جو خوش حالی اب ہمارے گاؤں میں ہے اس وقت نہ رہےگی۔

    چودھری بولے، رہے گی کیوں نہیں تم اب سٹھیا گئے ہو، تمہاری باتیں بھی ایسی ہوتی ہیں۔

    بکریدی میاں: میری باتوں کی سچائی تم لوگوں کو ابھی نہیں، کارخانہ کھلنے پرمعلوم ہوگی۔

    جوکھو نے مونچھوں پر تاؤ دیتے ہوئے کہا، ’’دیکھا جائےگا۔‘‘

    امریا میں تحصیلدار صاحب مع اپنے عملہ کے تشریف لائے اور چودھری گھسیٹے کے دالان میں اپنا ڈیرہ جمایا، چودھری گھسیٹے مارے مارے پھرنے لگے۔ کڑاہیاں چڑھ گئیں، پوری اور خستہ کچوری تلی جانے لگی۔ دودھ کے گھڑے آ گئے، بیگاروں نے تحصیلدار صاحب کے گھوڑے کے سامنے ہری ہری دوب لاکر ڈال دی۔ جوکھو کو تحصیلدار صاحب نے اپنی اردلی میں رکھا اور وہ چلم بھر بھر کر حقہ پلانے لگا۔ جب تحصیلدار صاحب اور ان کا عملہ کھاپی کر کچھ دیر آرام کر چکا تو کام کی باتیں شروع ہوئیں، جس زمین پر ہوائی جہاز کا کارخانہ بننے والا تھا اس کا نقشہ تحصیلدار صاحب نے کھولا۔ پٹواری نے مالکان کی فہرست پیش کی۔ مہاراج گنیشی، چودھری گھسیٹے، بکریدی میاں اور ہربجنا بنیا کا دل دھڑکنے لگا۔ تحصیلدار صاحب نے جوکھو سے کچھ آہستہ آہستہ باتیں کیں اور وہ ان کے پاس سے اٹھ کر چودھری کے پاس آکر بیٹھ گیا اور کہا پڑتی زمین کے علاوہ سرکار اور زمین بھی لےگی۔

    مزروعہ کی زمین پر بھی قبضہ کیا جائےگا یہ سنتے ہی سب کے ہوش اڑ گئے۔ مہاراج نے گھبراکر کہا اب کیا ہوگا۔

    جوکھو بولا ہوگا کیا، گھبرانے کی کچھ ضرورت نہیں۔ سرکار کیا معاوضہ نہ دے گی۔ تحصیلدار صاحب تو اسی کام کے لیے آئے ہیں۔ لیکن میری بات مانو تو ایک کام کرو، تحصیلدار صاحب کی بھینٹ کا کچھ انتظام کر دو، بس سب کام بن جائےگا۔

    بکریدی میاں ایک طرف چپ چاپ سر جھکائے بیٹھے تھے، بگڑ کر بولے مجھ سے یہ کام تو ہرگز نہ ہوگا۔ ایک تو زمین جائے اس پر رشوت بھی دوں۔ کہیں ایسا بھی کسی نے اندھیر دیکھا ہے۔

    جوکھو، ’’تم جانو میں نے اچھی ترکیب بتائی ہے۔ تحصیلدار صاحب کی کچھ خدمت کردوگے تو اس کے بدلے میں وہ سرکار سے زیادہ معاوضہ دلادیں گے۔ آگے آپ لوگوں کی مرضی۔‘‘ یہ کہہ کر جوکھو نے ہربجنا بنیا سے پوچھا، ’’کہو مہتو! تمہاری کیا رائے ہے۔جواب خوب سوچ سمجھ کر دینا کیوں کہ سرکاری معاملہ ہے۔ فریاد سے کچھ بھی فائدہ نہ ہوگا۔ سرکار کو زمین کی ضرورت ہے وہ لے کر ہی رہےگی۔‘‘

    ہربجنا بولا جو مہاراج چودھری اور بکریدی میاں کی رائے ہوگی سو میری۔

    چودھری گھسیٹے اور مہاراج نے جوکھو کی رائے مان لی۔ ہربجنا بنیا نے بھی ان کی تقلید کی لیکن بکریدی میاں نے صاف انکار کردیا۔ جوکھو نےتحصیلدار صاحب سے جاکر سارا حال کہہ دیا۔ اس کا نتیجہ یہ ہوا کہ مہاراج چودھری اور ہربجنا جی پرتی کو مزروعہ دکھایا گیا لیکن بکریدی میاں کی مزروعہ زمین کو بھی تحصیلدار صاحب نے اپنی رپورٹ میں پرتی ظاہر کیا۔ چنانچہ بکریدی میاں کے سوا سب کو حسب منشا معاوضہ کے لیے تحصیلدار صاحب نے سفارش کر دی۔

    بکریدی میاں کب خاموش رہنے والے تھے۔ بولے حضور انصاف کا خون نہ کیجیے۔ غریبوں کو ستاکر کوئی فائدہ نہ ہوگا۔

    تحصیلدار صاحب نے ڈانٹ کر کہا۔ خاموش رہو میں کچھ سننا نہیں چاہتا۔ جو کچھ سرکار نے حکم دیا ہے میں وہی کرتا ہوں۔ اس میں میرا کیا قصور ہے۔

    بکریدی میاں پھر بولے لیک حضور ہماری سرکار کا یہ منشا نہیں ہے کہ آپ غریبوں کا گلا دبائیں۔

    جوکھو نے کہا، بکریدی میاں چپ بھی رہو، حاکم سے زبان نہیں لڑایا کرتے۔

    مہاراج اپنی وفاداری کیوں نہ ثابت کرتے، کہنے لگے ہمارے شاستر میں بھی لکھا ہے راجہ، حاکم ایشور کا روپ ہوتا ہے۔ یہ ایشوری نیائے ہے کچھ کہنا سننا فضول ہے۔

    چودھری گھسیٹے تو گاؤں کے مکھیا تھے، انھوں نے دیکھا کہ تحصیلدار صاحب کے خوش کرنے کا یہی موقع ہے، کہنے لگے، ’’ہاں بکریدی میاں تمہاری یہ بری عادت ہے کہ اپنے آگے کسی کی نہیں سنتے۔‘‘

    بکریدی میاں بولے، ’’یارو کیا کہتے ہو ظلم ہو تو فریاد بھی نہ کروں۔‘‘

    پٹواری نے اپنی کارگزاری جتاتے ہوئے تحصیلدار صاحب سے کہا، ’’گزشتہ چیت میں تو بکریدی میاں نے اپنی تمام زمینداری اپنے لڑکے شبراتی میاں کےنام لکھ دی تھی، لڑکا بالغ ہے اور وہی اب جائداد کا مالک ہے۔ بکریدی میاں تو اب کچھ بول بھی نہیں سکتے۔‘‘

    بکریدی میاں: تو کیا شبراتی اور میں کوئی غیر ہوں، آخر وہ میرا ہی تو لڑکا ہے۔

    تحصیلدار صاحب بولے، شبراتی میاں کو بلاؤ۔ میں بکریدی میاں سے کچھ بات نہیں کرنا چاہتا۔

    جوکھو نے کہا، حضور ابھی بلائے لاتا ہوں۔

    تحصیلدار نے بکریدی میاں سے کہا تم یہاں سے چلے جاؤ۔ شاید تمہاری موجودگی میں شبراتی میاں مجھ سے کھل کر نہ بات کریں۔ یہ سرکاری معاملہ ہے، اس میں کسی غیر کی مداخلت میں کسی طرح پسند نہیں کر سکتا۔

    بکریدی میاں کی آنکھیں کھل گئیں، آج ان کو تحصیلدار صاحب کی بات سے اپنی زندگی میں پہلی مرتبہ اس کا تجربہ ہوا کہ باپ بیٹے کاملاپ بھی سرکار کو پسند نہیں ہے۔ گھبراکر دالان کی طرف اشارہ کرکے بولے، حضور میں اس کے اندر بیٹھا جاتا ہوں۔اس میں تو کچھ ہرج نہ ہوگا۔ تحصیلدار صاحب نےمسکراکر اجازت دی اور بکریدی میاں اٹھ کر اندر جا بیٹھے۔ وہاں سے وہ باہر کی سب باتیں بخوبی سن سکتے تھے۔ شبراتی میاں گاؤں میں کہیں پر بیٹھے ہوئے اپنے لنگوٹیا یاروں کے ساتھ تاش کھیل رہے تھے۔ دنیا میں کیا ہو رہا ہے اس کی انھیں کچھ فکر نہ تھی۔ صبح اٹھتے ہی اپنی پچھائیں گائے کا سیر بھر دودھ پیتے اور پھر گپ شپ اڑانے کے لیے گھر سے باہر نکل جاتے۔ جب جوکھو نے ان سے جاکر کہا، ’’چلو بھیا تم کو تحصیلدار صاحب بلاتے ہیں‘‘ تو وہ وہاں سے فوراً چودھری کے دروازے پر آئے۔ راستہ میں جوکھو نے خوب اچھی طرح ورغلایا۔ تحصیلدار صاحب نے شبراتی میاں کو دیکھ کر کہا، ’’آؤ خاں صاحب میرے پاس بیٹھو۔‘‘ شبراتی میاں کا سر اونچا ہو گیا۔ تحصیلدار صاحب بڑے اچھے آدمی ہیں وہ میری اتنی قدر کریں گے اس کا تو مجھے خیال بھی نہ تھا۔

    بکریدی میاں نے بھی سب کچھ سنا اور دیکھا، انھوں نے سوچا، ’’تحصیلدار صاحب میرے لڑکے کو بہکا رہے ہیں، ہائے اگر اس نےمعاوضہ قبول کر لیا تو میری کتنی بھد ہوگی۔ گاؤں والوں کی نظر میں ذلیل ہو جاؤں گا۔ نہیں نہیں شبراتی بغیر میرے پوچھے ہرگز کوئی جواب نہ دے گا۔‘‘

    تحصیلدار صاحب نے شبراتی میاں سے کہا، ’’دیکھو خاں صاحب یاںں پر سرکار ہوائی جہاز کا کارخانہ بنوانے والی ہے۔ اسمیں تمہاری بھی زمین ہے۔ سرکار کو اس کی ضرورت ہے۔ آپ کو کوئی عذر تو نہیں ہے؟ شبراتی میاں سے جب مہاراج نے کہا تھا کہ تمہاری رائے کی کوئی ضرورت نہیں ہے، اسی دن سے وہ جلے ہوئے تھے۔ آج تحصیلدار صاحب نے ان کی رائے طلب کی تو وہ خوش ہو گئے۔ ادھر جوکھو اور ان کے دوستوں نے بھی ان کو خوب بہکایا تھا۔ ہوائی جہاز کا کارخانہ کھلےگا تو خوب مزہ آئےگا۔ قسم قسم کی دوکانیں کھلیں گی، بازار لگےگا، ہوائی جہاز دیکھیں گے۔ شہر کا لطف گاؤں ہی میں آ جائےگا۔ شبراتی میاں مستقبل کی خوشی میں مگن تھے۔ باپ سے پوچھنے کا انھیں کچھ خیال نہ رہا۔ جھٹ سے بول اٹھے، ’’جو سرکار کی مرضی مجھے کوئی عذر نہ ہوگا۔‘‘

    شبراتی کی باتیں سن کر بکریدی میاں دنگ رہ گئے۔ شبراتی کی سعادت مندی پر ان کو بڑا ناز تھا۔ وہ خلف نکل جائےگا۔ اس کا انھیں سان گمان بھی نہ تھا۔ اگر اس سے پہلے کوئی ان سے کہتا کہ شبراتی خود مختار ہوگیا ہے تو وہ ہرگز یقین نہ کرتے لیکن آج ان کو معلوم ہو گیا کہ شبراتی پر اب ان کا کوئی اختیار نہیں۔ رنج و غم سے بکریدی میاں کا کلیجہ چھٹنے لگا، ہواس باختہ دالان سے باہر نکل آئے۔ تحصیلدار صاحب نے چٹکی لی، کہو بکریدی میاں اب کیا کہتے ہو، شبراتی میاں تو راضی ہو گئے۔ اب تم ان کو بہکا بھی نہیں سکتے۔ سب لوگ ہنسنے لگے۔ بکریدی میاں کا سر نیچا ہو گیا۔ ان کوایسا معلوم ہونے لگا گویا تمام دنیا ان کا مذاق اڑا رہی ہے۔ وہ اپنی نظروں میں خود حقیر معلوم ہونے لگے اور یہ سب کچھ شبراتی میاں کی وجہ سے ہوا۔ شبراتی میاں نے ان سے کچھ پوچھنے کی ضرورت ہی نہ سمجھی اسی کا بکریدی میاں کو بہت صدمہ تھا۔ پانی میں ڈوبتا ہوا انسان بچنے کے لیے ہاتھ پاؤں مارتا ہے۔ دل کے پھپولے کو چھیڑ دیجیے تو وہ پھوٹ جائیں گے،