Haneef Kaifi's Photo'

حنیف کیفی

1934 - 2021 | دلی, انڈیا

حنیف کیفی

اشعار 10

مدتیں گزریں ملاقات ہوئی تھی تم سے

پھر کوئی اور نہ آیا نظر آئینے میں

انا انا کے مقابل ہے راہ کیسے کھلے

تعلقات میں حائل ہے بات کی دیوار

اپنے کاندھوں پہ لیے پھرتا ہوں اپنی ہی صلیب

خود مری موت کا ماتم ہے مرے جینے میں

تمام عالم سے موڑ کر منہ میں اپنے اندر سما گیا ہوں

مجھے نہ آواز دے زمانہ میں اپنی آواز سن رہا ہوں

ملے وہ لمحہ جسے اپنا کہہ سکیں کیفیؔ

گزر رہے ہیں اسی جستجو میں ماہ و سال

غزل 8

کتاب 11

متعلقہ مصنفین

"دلی" کے مزید مصنفین

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

GET YOUR FREE PASS
بولیے